Qabz e Zaman | Book Corner Showroom Jhelum Online Books Pakistan

QABZ E ZAMAN قبض زماں

Inside the book
QABZ E ZAMAN

PKR:   400/-

Author: SHAMSUR RAHMAN FARUQI
Pages: 167
Year: 2021
ISBN: 978-969-662-321-2
Publisher: Book Corner
★★★★★
★★★★★

’’کئی چاند تھے سر آسماں‘‘ کے مصنف شمس الرحمٰن فاروقی اُردو دنیا کی ایسی عہدساز شخصیت ہیں جن کے کام، علمی توفیقات اور تخلیقی امتیازات کا ہر سطح پراعتراف کیا گیا۔ ہندوستانی حکومت نے انھیں ’’پدم شری ‘‘ جیسا بڑا ایوارڈ دیا تو حکومتِ پاکستان کی طرف سے ’’ستارۂ امتیاز‘‘ کے حق دار ٹھہرائے گئے۔ خلاق شاعر، مجتہد نقاد، دانشور اور شب خون جیسے رجحان ساز رسالے کے مدیر اور سب سے بڑھ کر ایسے ناول نگار جنہوں نے اپنے فن پاروں کو تہذیبی مرقع بنا کر اس صنف پر امکانات کے نئے آفاق کھول دیے۔ شمس الرحمٰن فاروقی 15 جنوری 1936ء کو پرتاب گڑھ، یوپی، ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ علم وفضل کی قدیم روایت اپنے بزرگوں سے وراثت میں پائی۔ دادا حکیم مولوی محمد اصغر فاروقی تعلیم کے شعبے سے وابستہ تھے اور فراق گورکھپوری کے استاد تھے۔ الٰہ آباد یونیورسٹی سے 1953ء میں انگریزی میں ایم اے کیا۔ مقابلے کا امتحان پاس کرکے اعلیٰ حکومتی عہدوں پر فائز رہے۔ اسی دوران ان کے تنقیدی مضامین اور تراجم شائع ہونا شروع ہوئے جنھوں نے ادبی دُنیا کو اپنی جانب متوجہ کر لیا۔ جون 1966ء میں ادبی رسالہ ’’شب خون‘‘ نکالا اور کئی نسلوں کے ادیبوں کی تربیت کی۔ انھوں نے نقد ، شاعری، فکشن، لغت نویسی، داستان، عروض، ترجمہ جیسے کئی فنون پر کتابیں لکھیں۔ تنقید کے میدان میں ان کا سب سے معرکہ آرا کام ’’شعر شور انگیز‘‘ کو سمجھا جاتا ہے۔ چار جلدوں پر مشتمل اس کتاب میں میر تقی میرؔ کی تفہیم جس انداز سے کی گئی ہے اس کی کوئی مثال اُردو ادب میں نہیں ملتی۔ اس کتاب پر انھیں 1996ء میں سرسوتی سمان ادبی ایوارڈ بھی ملا۔ انھوں نے ارسطو کی ’’بوطیقا‘‘ کا بھی ازسرنو ترجمہ کیا اور اس کا بہت شاندار مقدمہ تحریر کیا۔ ان کا شعری کلیات ’’مجلس آفاق میں پروانہ ساں‘‘ کے نام سے شائع ہوا۔2001ء میں ان کے افسانوں کا مجموعہ ’’سوار اور دوسرے افسانے‘‘ کے عنوان سے شائع ہوا۔ ان افسانوں نے انھیں مائل کیا کہ وہ برصغیر کی مغلیہ تاریخ کے پس منظر میں کوئی ناول تحریر کریں۔ یہ ناول ’’کئی چاند تھے سرِآسماں‘‘ کے نام سے شائع ہوا۔ اس ناول نے شائع ہوتے ہی کلاسک کا درجہ حاصل کیا۔ اُردو کے تمام بڑے فکشن نگاروں، نقادوں اور قارئین نے اس کا والہانہ استقبال کیا جس کا اندازہ اس ناول کے متعدد ایڈیشنز اور تراجم کی اشاعت سے لگایا جاسکتا ہے۔ پاکستان میں اس ناول کا کلاسک ایڈیشن شائع کرنے کا اعزاز ’’بک کارنر‘‘ جہلم کو حاصل ہوا، اس جدید اشاعت کو شمس الرحمٰن فاروقی صاحب نے بے حد سراہا۔ ان کا داد بھرا پیغام موصول ہونا ... (بنام امر شاہد) ’’ماشاءاللہ، تم‌کتاب کو دُور تک پھیلا رہے ہو۔ امید ہے کتاب جلد پوری فروخت ہو جائے گی -تمھارا شمس الرحمٰن فاروقی۔‘‘ ... ادارے کے لیے کسی اعزاز سے کم نہیں۔
اکتوبر 2020ء دُنیائے اُردو اس خبر سے بہت مضطرب ہوئی کہ شمس الرحمٰن فاروقی کووڈ 19 کے وائرس کا شکار ہو گئے ہیں۔ انھیں علاج کے لیے دہلی منتقل کیا گیا جہاں وہ اس وائرس کو شکست دینے میں کامیاب ہو گئے۔ بعدازاں ان کے بےحد اصرار پر 25 دسمبر 2020ء کی صبح انھیں واپس الٰہ آباد منتقل کیا گیا مگر وہاں پہنچنے کے آدھے گھنٹے بعد ہی ان کا انتقال ہو گیا۔ یہ خبر سماجی رابطوں کے ذرائع سے فوراً پوری ادبی دنیا میں پھیل گئی۔ انڈیا، پاکستان اور جہاں جہاں اُردو بولی، لکھی اور پڑھی جاتی ہے وہاں اسے خاندان کے کسی بزرگ کی موت کی خبر کی طرح سمجھا گیا۔ ان کی وفات سے اُردو ادب ایک بلند قامت ادبی شخصیت سے محروم ہو گیا۔ انھیں ان کی زندگی میں جو شہرت، مقبولیت اور پذیرائی ملی وہ بہت کم افراد کو ملتی ہے مگر وہ اس سے کہیں زیادہ کے حق دار تھے۔ (ناشر)

تنقید اور اس کے بعد ناول اور افسانے کے میدان میں شمس الرحمٰن فاروقی اپنا لوہا منوا چکے ہیں۔ لیکن وہ اپنے پچھلے کارناموں پر مطمئن ہو کر بیٹھ جانے والے آدمی نہیں۔ ان کی مہم جُو طبیعت نئے راستوں کی طرف رواں ہو جاتی ہے۔ ’’کئی چاند تھے سرِآسماں‘‘ میں اُنھوں نے مغلیہ دَور کی شان و شوکت کو اس طرح محفوظ کر دیا جو اس کے شایانِ شان تھی۔ مختصر ناول ’’قبضِ زماں‘‘ میں اُنھوں نے ہند اسلامی تاریخ کے ماضی میں سے ایسا کردار ڈھونڈ کر نکالا ہے جو کہنے کو عام آدمی ہے لیکن وقت کا سفر کرتے ہوئے ایک اور عہد میں جا پہنچتا ہے۔ وہ اپنے وقت کو گُم کر بیٹھتا ہے اور پُراسرار حالات کے تحت اپنے زمانے سے آگے جا پہنچتا ہے۔ کیسا عجیب تجربہ ہے اور اس کو الفاظ کی گرفت میں لانا کس قدر مشکل۔ لیکن فاروقی صاحب اس تجربے کو بڑی مہارت کے ساتھ اپنی گرفت میں لے آتے ہیں۔ اس صورتِ حال کا بیان بھی حیرت ناک ہے اور اس کو پڑھنے کا تجربہ بھی بہت انوکھا ہے۔
انتظار حسین
ہماری تہذیبی تاریخ کا وہ لمحہ یادگار تھا جب محمد حسین آزاد ادبی تاریخ لکھنے بیٹھے اور ان کے جادونگار قلم سے ایسے مرقعے سامنے آئے جو افسانوں کی سی دل چسپی کے ساتھ پڑھے جا سکتے ہیں۔ ہمارے زمانے میں یہ کارنامہ شمس الرحمٰن فاروقی صاحب کا ہے کہ تنقید لکھتے لکھتے ناول اور افسانے کی طرف آ گئے۔ ان کا یہ مختصر ناول ایسا ہے کہ پڑھنے والا دانتوں میں اُنگلی دبا لیتا ہے۔ ’’قبضِ زماں‘‘ کے مرکزی کردار کے ساتھ ساتھ پڑھنے والے بھی وقت کے اس سفر پر روانہ ہو جاتے ہیں...
ڈاکٹر اسلم فرخی

یوں تو شمس الرحمٰن فاروقی کے فکشن کو پڑھنا علمی، ادبی اور تہذیبی زندگی سے چھلکتے ہوئے ایک عہد میں جاکر بس جانے کا نام ہے مگر ان کے مختصر ناول ’’قبض زماں‘‘ کا مطالعہ یوں مختلف ہو جاتا ہے کہ یہ کسی ایک عہد کی تہذیبی زندگی پر محیط نہیں، اس سے کہیں بڑھ کر ہے۔ اس ناول میں ایک ایسا شخص ہے جس سے اس کا اپنا زمانہ اور وہ اپنے زمانے سے پچھڑ گیا ہے۔ وہ عجیب اور ناقابلِ یقین حالات سے گزرتے ہوئے ایک اور زمانے میں جا پڑتا ہے۔ یوں یہ ناول ہمیں ایک سے زیادہ زمانوں اور زمینوں کی سیر کراتا اور زندگی کے ان بھیدوں کے مقابل کرتا ہے جو سمے کی سمٹن سے نکلتے اور حیرت کی پھیلی آنکھ پر کھلتے چلے جاتے ہیں۔
محمد حمید شاہد

USER RATINGS

RATE THIS BOOKS

Tell others what you think

Reviews

A

Ali Abdullah

بچپن میں ایک ٹی وی سیریل " The Girl From Tomorrow" دیکھی تھی جس میں ایک لڑکی سنہ 3000 سے واپس ماضی کے 1990 میں پہنچ جاتی ہے اور پھر اسے اس دور کے مطابق رہن سہن سیکھنا پڑتا ہے- یہ اور بات کہ وہ دوبارہ واپس اپنے زمانے میں کسی نہ کسی طرح پہنچنے میں کامیاب بھی ہو جاتی ہے- سفر دروقت یعنی ٹائم ٹریول پر کئی افسانے اور فلمیں بنائی جا چکی ہیں- یہ وہ کیفیت ہوتی ہے جس میں سفر کرنے والے کو معلوم ہوتا ہے کہ وہ زمان میں کہاں کہاں اور مکاں میں کس جگہ سے کس جگہ سفر کر رہا ہے، چاہے یہ سفر ارادی ہو یا اتفاقی، ہوش میں ہو یا بے ہوشی میں، مسافر کو سفر کی نوعیت معلوم ہوتی ہے- اس سلسلے میں واشنگٹن ارونگ کی The Tale from Alhambra میں بھی ایسی کہانی موجود ہے اور اس کے علاوہ اصحاب کہف کا قصہ بھی اکثر لوگ جانتے ہیں- لمبی نیند سونے کی روایتیں چینی تہذیب میں بھی پائی جاتی ہیں جبکہ اسی طرح کا ایک قصہ ہندوستان میں "بھاگوت پران" کہلاتا ہے جس میں بادشاہ مچکند پر طویل نیند طاری ہو جاتی ہے- آئن سٹائن کے نظریہ اضافیت کے مطابق وقت سکڑ سکتا ہے اور رک بھی سکتا ہے-
شمس الرحمن فاروقی کا ناول "قبض زماں" بھی بظاہر اسی سے ملتی جلتی کہانی ہے، لیکن اسے ٹائم ٹریول نہیں کہا جا سکتا کیونکہ اس میں جو وقت گزرا ہے وہ نیند میں نہیں بلکہ جاگتے میں گزارا گیا ہے- طویل مدت کو چند گھنٹوں میں محصور ہو جانے کو صوفیاء "قبض زماں" کہتے ہیں جبکہ جس پر یہ واقعہ گزرے گا صرف وہی جانتا ہو گا کہ دراصل کتنی مدت گزری ہے اسے "بسط زماں" کہا جاتا ہے- یہ ناول حضرت شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی رح کے بیان کردہ قبض زماں کے ایک واقعے سے متاثر ہو کر لکھا گیا ہے- بقول مصنف یہ قصہ انہیں افسانہ گوئی کے لیے مناسب محسوس ہوا اور اس میں اٹھارویں صدی کے رنگ کا فرضی اضافہ کر کے انہوں نے اسے مکمل ناول کی شکل دے دی- یہ گل محمد نامی ایک شخص کی کہانی ہے جو ابراھیم لودی کے دور کا ہے لیکن اچانک ایک روز وہ اپنے زمانے سے ڈھائی سو برس آگے اٹھارویں صدی میں آن پہنچتا ہے- واقعہ کچھ یوں ہے کہ گل محمد اپنی بیٹی کی شادی کے لیے ایک طوائف سے قرض لیتا ہے- کچھ عرصے بعد وہ قرض واپس کرنے اس طوائف کی حویلی پہنچتا ہے تو معلوم پڑتا ہےکہ وہ طوائف تو وفات پا چکی ہے- چناچہ گل محمد اس کی قبر پر فاتحہ خوانی کی نیت سے جاتا ہے تو وہاں اسے ایک شگاف نظر آتا ہے جس کے اندر روشنی چمکتی دکھائی دیتی ہے- گل محمد ڈرتے ڈرتے اس میں داخل ہو جاتا ہے اور وہاں اسے باغات اور ایک شاندار محل نظر آتا ہے- وہ محل میں داخل ہوتا ہے تو اسے وہاں وہی امیرجان نامی طوائف ایک تخت پر بیٹھی دکھائی دیتی ہے، وہ اس کے پاس جا کر اسے قرض واپس کرنے کی کوشش کرتا ہے لیکن اسے وہاں سے زبردستی نکال دیا جاتا ہے- محل سے نکل کر وہ ارگرد باغات دیکھنے نکلتا ہے اور وہاں سے جب واپس آتا ہے تو آغاز ہوتا ہے اس انجانے سفر کا جو اسے ڈھائی سو سال آگے پہنچا دیتا ہے- اس قبر پر بنے شگاف سے واپس نکل کر اس پر کیا بیتتی ہے اور وہ کس زمانے اور تہذیب کو دیکھتا ہے، کیسے وہ محمد علی حشمت، عبد الحئی تاباں، قطب الدین علی خان اور راج سبقت ایسے لوگوں سے شناسائی حاصل کرتا ہے، یہ تو آپ کو مکمل ناول پڑھ کر ہی معلوم ہو گا، لیکن مصنف کی داستان گوئی، تاریخ پر عبور، ہندی، فارسی اور ریختہ پر گرفت قاری کو مسحور کر دینے والی ہے-
ڈھائی صدی کا عرصہ گزر جانے کے بعد گل محمد کو وہ معاشرہ نظر آتا ہے جو مشکلات کے باوجود ایک تہذیبی عہدے پر قائم ہے- دہلی، "دلی" کہلانے لگتا ہے جبکہ فن تعمیر، لباس و اطوار، تمباکو، ولایتی شراب، بارود وغیرہ کا عام استعمال گل محمد کے لیے حیرانی کا باعث بنتا ہے- بعض کتب ایسی ہوتی ہیں جنہیں ایک سے زائد مرتبہ پڑھنے پر ہی ان کی اصل روح قاری پر آشکار ہوتی ہے- شمس الرحمن فاروقی کا یہ ناول بیک وقت ادبی اور تاریخی اہمیت کا حامل ہے- منطر کشی اور مختلف شخصیتوں کی عکاسی نہایت خوبصورت اور دلچسپ انداز میں بیان کی گئی ہے- ایک ہی نشست میں ختم کیا جانے والا یہ مختصر ناول ایک سے زائد مرتبہ پڑھے جانے لائق ہے- کئی چاند تھے سر آسماں کے بعد فاروقی صاحب کا یہ ایک لاجواب اور منفرد شاہکار ہے جسے نہ پڑھنا ادبی زیادتی ہو گی-